Posts

Showing posts from November, 2016

آیئں سكهرکی سیر کو چلیں

Image
سكهر صوبہ سندھ کا تیسرا بڑا شہر ہے بتایا جاتا ہے کی جدید سکھر کی بنیاد فرنگی جنرل چارلس جیمز نیپئر نے ١٨٤٠ کو رکھی شمالی سندھ مئی دریائی سندھ کے سنگھم پے واقع یہ شہر سندھ سیمت پاکستان بھر میں اپنی تاریخی اور بیشبہا ثقافتی  ورثا ، قدرے متعدل مذہبی رجحان ، شدید گرمی اور سكهر بیراج کی وجہ سے جانا جاتا ہے اپنی جگرافیائی محل وقوع کی وجہ سے سكهر کثیر قومی اور کثیر لسانی افراد پر مشتعمل شہر ہے  یہی وجہ ہے کی یہاں کئی صدیوں سے مسلمان، ہندو اور مسیحی برادری انتہایی محبّت ور پرامن بقاے باہمی کے اصولوں کے مطابق  رواداری کے ساتھ رہتے ہیں 
  تاریخ کے مطالعے سے معلوم ہوتا ہے کہ 326 قبل مسیح میں  الیگزینڈر عظیم کے سندھ پر حملہ کرنے تک سكهر شہر سندھ کا دارلخلافہ ہوا کرتا تھا 711 عیسوی میں 17 سالہ محمد بن قاسم سکھر اور زیریں پنجاب سمیت سندھ پر حملہ آورہو گیے  اور سکھر کواموی خلافت کا حصہ بنایا. بعد میں مغلوں اور کئی نیم خودمختار قبائل سکھر پر حکومت  کرتے رہے سکھر شہر 1809 اور 1824. درمیان یرپور میرس کے کے حوالے کردیا گیا تھا، شاہ شجاع  (قندھار کے ایک سردار)نے سکھر کے قریب تالپور کو شکست دی اور 1843 م…